شادی کی انگوٹھی مخصوص انگلی میں ہی کیوں پہنی جاتی ہے؟وجہ سامنے آگئی

لاہور (نیوز ڈیسک) شادی یا منگنی کی انگوٹھی کو بائیں ہاتھ کی چوتھی انگلی میں پہننے کا تعلق قدیم یونانیوں سے ہے۔ ان کا یہ عقیدہ تھا کہ ایک خاص اعصابی رگ اس انگلی سے گزر کر براہ راست دل تک جاتی ہے جس کو “محبت کی رگ” کا نام دیا جاتا ہے۔ لہذا یہ امر ایک دوسرے شخص کی جانب سے انسان کے دل کو قید کر لینے پر دلالت کرتا ہے۔ العریبہ میں چھپنے والی ایک رپورٹ کے مطابق شادی کی انگوٹھی کی رسم قدیم رومی عہد سے وابستہ ہے۔ شادی کی انگوٹھی کو بائیں ہاتھ کی مخصوص انگلی میں پہننے کا آغاز تقریبا 3000 سال قبل مسیح شروع ہوا تھا۔ جبکہ ایک دوسری تاریخی روایت کے مطابق قدیم مصری باشندوں نے سب سے پہلے شادی کی انگوٹھی کو دائمی ساتھ کی علامت کے طور پر استعمال کیا۔

Facebook Comments

مزید

بھارت میں کنواری لڑکی نے ماں بننے کی خبر غلط نمبر پرواٹس ایپ کر دی پھر جو ہوا اس نے خو د بھی نہیں سو چا ہو گا
نوجوان لڑکی کی کم عمر لڑکے کیساتھ زبردستی بد فعلی، حاملہ ہونے پر رہائی مل گئی
نیاکاروبار کرنے والے افراد کے لیے 6 مشورے
فیس بک کی دوستی تین خاندانوں کی مہنگی پڑ گئی، ایک لڑکی دو لڑکوں کی زندگی سے کھیل گئی
کتا اچھل اچھل کر ان کی چھاتی کی جانب لپکنے لگا
فحش فلمیں دیکھنا مردوں اور عورتوں کیلئے کیسا ہے؟ خوفناک تحقیق آگئی