شادی کی انگوٹھی مخصوص انگلی میں ہی کیوں پہنی جاتی ہے؟وجہ سامنے آگئی

لاہور (نیوز ڈیسک) شادی یا منگنی کی انگوٹھی کو بائیں ہاتھ کی چوتھی انگلی میں پہننے کا تعلق قدیم یونانیوں سے ہے۔ ان کا یہ عقیدہ تھا کہ ایک خاص اعصابی رگ اس انگلی سے گزر کر براہ راست دل تک جاتی ہے جس کو “محبت کی رگ” کا نام دیا جاتا ہے۔ لہذا یہ امر ایک دوسرے شخص کی جانب سے انسان کے دل کو قید کر لینے پر دلالت کرتا ہے۔ العریبہ میں چھپنے والی ایک رپورٹ کے مطابق شادی کی انگوٹھی کی رسم قدیم رومی عہد سے وابستہ ہے۔ شادی کی انگوٹھی کو بائیں ہاتھ کی مخصوص انگلی میں پہننے کا آغاز تقریبا 3000 سال قبل مسیح شروع ہوا تھا۔ جبکہ ایک دوسری تاریخی روایت کے مطابق قدیم مصری باشندوں نے سب سے پہلے شادی کی انگوٹھی کو دائمی ساتھ کی علامت کے طور پر استعمال کیا۔

Facebook Comments

مزید

پانچ ہزار میٹر بلند عمارت کی تیاری ، جان کر آپ کی حیرت کی انتہا نہ رہے گی
63برس جیل میں گزارنیوالے قیدی کارہائی سے انکار ، وجہ کیابنی؟ جانئے
یہ میری نہیں ، جنات کی بچی ہے۔ خاتون نےعجیب و غریب بچی کو جنم دینے کے بعد اسے دودھ پلانے سے انکار کر دیا
وہ گاؤں جہاں شادی سے پہلے والدین بننا لازمی ہوتا ہے
ایک پاکستانی لڑکا اور لڑکی لندن والوں کوکیسے چونا لگا رہے ہیں؟ شرمناک انکشاف
آبِ زم زم کا کنواں کی عمر کتنا عرصہ ہو گئی؟ معجزہ ثابت ہو گیا